کشمیر

رہائی کے بعد محبوبہ مفتی کا پہلا بیان

سابق وزیر اعلیٰ کشمیر محبوبہ مفتی نے ایک آڈیو پیغام جاری کیا جس میں انہوں نے کہا کہ وہ آرٹیکل 370 کے لئے پھر سے جدوجہد کریں گی۔
ایک منٹ 23 سیکنڈ کے پیغام میں محبوبہ مفتی نے 5 اگست 2019 کو ۔۔ بلیک ڈے ۔۔ یوم سیاہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ ہمیں برا لگا۔
محبوبہ نے کہا کہ ‘ ایک سال سے زائد مدت تک حراست میں رکھنے کے بعد مجھے رہا کر دیا گیا ہے، اس سیاہ دن کا سیاہ فیصلہ میرے دل اور روح پر ہر لمحہ حملہ کرتا رہا۔ مجھے احساس ہے کہ یہی کیفیت جموں وکشمیر کے لوگوں کی رہی ہوگی۔
سابق وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ہم میں سے کوئی بھی اس دن کی ڈاکہ زنی اور بےعزتی کو بھول نہیں سکتا۔ اب ہم سب کو ارادہ کرنا ہو گا کہ جو دلی دربار نے 5 اگست کو غیر آئینی اور غیر جمہوری فیصلہ لیا ہمیں اسے واپس لینا ہو گا۔
انہوں نے کہا کہ جو لوگ بند کئے گئے ہیں، سبھی کو رہا کیا جائے۔ ہمیں پتہ ہے کہ یہ راہ آسان نہیں ہو گی لیکن ہم جدوجہد کریں گے اور یہ راہ آسان نہیں ہوگی۔
ہم مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے بھی جدوجہد کریں گے ۔ کیونکہ اب تک ہزاروں کشمیریوں نے اپنے حق کیلئے جانیں نچھاور کیں ۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ محبوبہ مفتی کے جاری کردہ اس پیغام میں ان کا چہرہ نہیں دکھایا گیا اور ویڈیو کا بیک گراونڈ پوری طرح سے کالا ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Open chat
Need help ?