تازہ ترین

پٹرول بحران سے متعلق انکوائری کمیشن کی رپورٹ آ گئی

انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں ملک میں حالیہ پیٹرول بحران کو مصنوعی قرار دے دیا گیا

ملک بھر میں حالیہ پٹرول بحران سے متعلق انکوائری کمیشن کی رپورٹ آ گئی ہے جس میں حالیہ پٹرول بحران کو مصنوعی قرار دیا گیا ہے۔ نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ انکوائری کمیشن نے رپورٹ میں اوگرا، پیٹرول ڈویژن، آئل مارکیٹںگ کمپنیوں کو پٹرول بحران کا ذمہ دار قرار دیا گیا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ جون 2020ء میں آئے پیٹرول بحران پر قائم انکوائری کمیشن کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اوگرا اپنی بنیادی ذمہ داریوں سے غافل رہا، پیٹرول بحران مصنوعی تھا۔
رپورٹ کے مطابق عالمی سطح پر قیمتوں میں کمی کے موقع کو بحران میں تبدیل کیا گیا، عالمی سطح پر قیمتیں کم ہونے پر درآمد پر پابندی عائد کر دی گئی اور اوگرا اپنی بنیادی ذمہ داریوں سے غافل رہا۔
انکوائری کمیشن کی رپورٹ کے مطابق پٹرول کی قیمتیں بڑھنے تک کمپنیوں نے تیل ذخیرہ کیا یا سپلائی کم کی، پٹرولیم ڈویژن میں ڈی جی آئل کی تعیناتی غیرقانونی طور پر کی گئی۔

رپورٹ میں انکشاف کیا گیا کہ 20 روز تک تیل ذخیرہ نہ کرنے کی مجرمانہ غفلت کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ کمپنیوں سے 20 روز تک تیل ذخیرہ نہ کروانا اوگرا کی ناکامی ہے۔ انکوائری کمیشن نے رپورٹ میں اوگرا میں چئیر پرسن اور ممبران کی تعیناتی پر بھی سوالات اُٹھا دیے ہیں۔ اس رپورٹ میں اوگرا کو ایکٹ آف پارلیمنٹ کے ذریعے تحلیل کرنے کی سفارش بھی کی گئی ہے۔
انکوائری کمیشن نے سیکریٹری پٹرولیم ڈویژن، ڈی جی آئل، عمران ابڑو کے خلاف کارروائی کی سفارش کی اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا تعین 15 کی بجائے ماہانہ بنیاد پر کرنے کی سفارش کی ۔ رپورٹ میں ڈی جی آئل کو غیرقانونی طور پر کوٹہ مختص کرنے میں ملوث قرار دیتے ہوئے کہا گیا کہ عمران ابڑو اور ان کا اسٹاف افسران بالا کے حکم پر عملدرامد کرتے رہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Open chat
Need help ?